Wo Aalim Khawab Ka Tha

وہ عالم خواب کا تھا

وہ عالم خواب کا تھا

سو رہے تھے سب

مگر اک وہ

اکیلا جاگ اٹھا تھا

کچھ ایسے نیند ٹوٹی تھی

کہ ہر ہر عضو بے کل تھا

بدن سارا

تغیر کی طلب میں

ماہی بے آب کی صورت تڑپتا تھا

جنوں‌‌‌ و بے قراری نے

رگوں میں بجلیاں بھر دیں

ہزاروں سال سے رکھے ہوئے پتھر کو سرکایا

وہ اپنے غار سے باہر نکل آیا

نگاہیں روشنی سے چار ہو کر جوں ہی پلٹیں

اس نے خود کو

زندگی سے وصل کے امکان میں پایا

بہت لمبا بہت دشوار رستہ طے کیا اس نے

نہ جانے کتنے دریا کوہ و صحرا درمیاں آئے

طلسم و ہفت خواں آئے

تب اس شہر بلند و بالا و پر کیف میں پہنچا

جہاں انسان اور حیوان سب بیدار رہتے تھے

بڑے بے خار ہوتے تھے

زباں تھی سوکھ کے کانٹا

پپوٹے پھول کے کپا

کہ اس پر جاگتے رہنے کا ایسا شوق غالب تھا

بدن وحشت کا طالب تھا

مگر یہ کیا

اسے معلوم یہ کب تھا

ذرا جو مختلف ہو

شہر بیداراں میں اس پر کیا گزرتی ہے

دکانیں جن کی اونچی تھیں

اسے مخبر سمجھتے تھے

جو ماشہ خور تھے پھیری لگاتے تھے

اسے پاگل بتاتے تھے

وہاں بازار میں کوئی اسے کچھ بھی نہ دیتا تھا

جو سکے پاس تھے اس کے انہیں کوئی نہ لیتا تھا

وہ واپس جا نہ سکتا تھا

خدائے لم یزل کے حکم سے

اس غار کا منہ بند تھا پھر سے

عجب بے یاوری ناآشنائی تھی

سزا محض اس نے

آنکھ کھل جانے کی پائی تھی

حارث خلیق

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(948) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Haris Khalique, Wo Aalim Khawab Ka Tha in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Nazam, and the type of this Nazam is Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope Urdu Poetry. Also there are 21 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.2 out of 5 stars. Read the Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Haris Khalique.