Takhayul Or Hai Nadeda Beeni Or Hoti Hai

تخیل اور ہے، نا دیدہ بینی اور ہوتی ہے

تخیل اور ہے، نا دیدہ بینی اور ہوتی ہے

یہ تنہائی ہے بس، خلوت نشینی اور ہوتی ہے

عجب دھڑکا لگا رہتا ہے دل کو اُس کی فرقت میں

مگر وہ پاس ہو تو بے یقینی اور ہوتی ہے

سیہ چشمی حسینوں کی تو ویسے بھی قیامت ہے

مگر پاسِ حیا کی سرمگینی اور ہوتی ہے

گریز اُس کا بجائے خود ادائے خاص ہے لیکن

خمارِ وصل کی ناز آفرینی اور ہوتی ہے

نہیں مشروط کارِ عاشقاں ترکِ سکونت سے

میاں، اہلِ جنوں کی نا مکینی اور ہوتی ہے

ہمیں ویسے تو یہ اہلِ جہاں کیا کچھ نہیں کہتے

مگر احبابِ دل کی نکتہ چینی اور ہوتی ہے

عرفان ستار

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(212) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Irfan Sattar, Takhayul Or Hai Nadeda Beeni Or Hoti Hai in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Love, Sad, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope Urdu Poetry. Also there are 92 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.6 out of 5 stars. Read the Love, Sad, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Irfan Sattar.