Samundar

سمندر

مرا دل اچھلتا سمندر

مرا جذبۂ بے اماں

میرا ایک ایک ارماں

اچھلتے سمندر کی صدیوں پرانی چٹانوں سے ٹکرا کے یوں ریزہ ریزہ ہوا ہے

کہ گھائل سمندر کے سینے میں محشر بپا ہے

ہر اک موج درد آشنا ہے

ہر اک قطرۂ آب انمول ہے گوہر بے بہا ہے

میں ہستی کے ساحل کا مبہوت و حیراں مسافر

مرے زرد چہرے پہ جمتی ہوئی ریت

میرا سرکتا ہوا جسم

سب کی نگاہوں کا مرکز بنا ہے

مگر کوئی ایسا نہیں

کوئی بھی تو نہیں

جو مری منجمد گہری جھیلوں سے گزرے

مرے دل کے قلزم میں اترے

جہاں کی ہر اک موج درد آشنا ہے

ہر اک قطرۂ آب انمول ہے گوہر بے بہا ہے

جہاں روح تن سے جدا ہے

ازل کے مسافر کی منزل ابد ہے بقا ہے

جمیل ملک

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(416) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Jameel Malik, Samundar in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Nazam, and the type of this Nazam is Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope Urdu Poetry. Also there are 29 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.5 out of 5 stars. Read the Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Jameel Malik.