Bol Uthne Pey Sawalat Pey Pabandi Hai

بول اُٹھنے پہ سوالات پہ پابندی ہے

بول اُٹھنے پہ سوالات پہ پابندی ہے

اب مرے دیس میں ہر بات پہ پابندی ہے

عدل و انصاف کے معیار عجب ہیں اُس کے

ظُلم سہنا ہے شکایات پہ پابندی ہے

جیتنے پر بھی لگا رکّھی ہے قدغن اس نے

یہ بھی کہتا ہے یہاں مات پہ پابندی ہے

خُشک سالی کا اثر کیوں ہے یہاں چہروں پر

کیا یہاں پیار کی برسات پہ پابندی ہے ؟

ساری بستی کو بنایا ہے گداگر اس نے

اور کہتا ہے کہ خیرات پہ پابندی ہے

فخر بھی ہم کو اُسی ارضِ وطن پہ ہے قمر

جہاں اِظہارِ خیالات پہ پابندی ہے

جمیل قمر

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(434) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Jamil Qamar, Bol Uthne Pey Sawalat Pey Pabandi Hai in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Love, Sad, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope Urdu Poetry. Also there are 68 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.1 out of 5 stars. Read the Love, Sad, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Jamil Qamar.