Gham Is Ko Sari Raat Sunaya To Kya -howa

غم اس کو ساری رات سنایا تو کیا ہوا

غم اس کو ساری رات سنایا تو کیا ہوا

یا روز اٹھ کے سر کو پھرایا تو کیا ہوا

ان نے تو مجھ کو جھوٹے بھی پوچھا نہ ایک بار

میں نے اسے ہزار جتایا تو کیا ہوا

خواہاں نہیں وہ کیوں ہی میں اپنی طرف سے یوں

دل دے کے اس کے ہاتھ بکا تو کیا ہوا

اب سعی کر سپہر کہ میرے موئے گئے

اس کا مزاج مہر پہ آیا تو کیا ہوا

مت رنجہ کر کسی کو کہ اپنے تو اعتقاد

دل ڈھائے کر جو کعبہ بنایا تو کیا ہوا

میں صید ناتواں بھی تجھے کیا کروں گا یاد

ظالم اک اور تیر لگایا تو کیا ہوا

کیا کیا دعائیں مانگی ہیں خلوت میں شیخ یوں

ظاہر جہاں سے ہاتھ اٹھایا تو کیا ہوا

وہ فکر کر کہ چاک جگر پاوے التیام

ناصح جو تو نے جامہ سلایا تو کیا ہوا

جیتے تو میرؔ ان نے مجھے داغ ہی رکھا

پھر گور پر چراغ جلایا تو کیا ہوا

میر تقی میر

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(681) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Mir Taqi Mir, Gham Is Ko Sari Raat Sunaya To Kya -howa in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Sad, Social Urdu Poetry. Also there are 269 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.3 out of 5 stars. Read the Sad, Social poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Mir Taqi Mir.