Hamd Ka Tarana

حمد کا ترانہ

جب روز سویرا ہوتا ہے

جب دور اندھیرا ہوتا ہے

جب دنیا کے اس گلشن میں

پھر نور کا پھیرا ہوتا ہے

ایک ایک کلی کھل جاتی ہے اور اک اک چڑیا گاتی ہے

اس ایسے سہانے منظر میں اللہ تری یاد آتی ہے

اللہ تری یاد آتی ہے

یہ دنیا رنگ بدلتی ہے

پھر ایک نئی کل چلتی ہے

یہ دنیا ہے میدان عمل

اس کل سے تان نکلتی ہے

ہر زندہ ہستی اس کی صدا پر کاموں میں لگ جاتی ہے

اس ایسے سہانے منظر میں اللہ تری یاد آتی ہے

اللہ تری یاد آتی ہے

کھیتوں پر دہقاں جاتے ہیں

کھیتی میں جان کھپاتے ہیں

دن بھر کی سختی سہہ سہہ کر

آرام کی راحت پاتے ہیں

جب آس ہری کھیتی کی ان کو محنت پر اکساتی ہے

اس ایسے سہانے منظر میں اللہ تری یاد آتی ہے

اللہ تری یاد آتی ہے

ہم نیک ارادے کرتے ہیں

سستی بیکاری سے ڈرتے ہیں

ہر روز سدا آگے ہی بڑھیں

ایسے جینے پر مرتے ہیں

جب نیکی نور کا پرتو بن کر چہروں کو چمکاتی ہے

اس ایسے سہانے منظر میں اللہ تری یاد آتی ہے

اللہ تری یاد آتی ہے

جب ہم سب پڑھنے آتے ہیں

آپس میں گھل مل جاتے ہیں

جب سب کے سب خوش ہو ہو کر

نیرؔ کا نغمہ گاتے ہیں

جب آپس کی یہ جوت سبھی کے سینوں کو گرماتی ہے

اس ایسے سہانے منظر میں اللہ تری یاد آتی ہے

اللہ تری یاد آتی ہے

اللہ تری یاد آتی ہے

محمد شفیع الدین نیر

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(1037) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Mohammad Shafi Uddin Nayyar, Hamd Ka Tarana in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Hamd, and the type of this Nazam is Islamic Urdu Poetry. Also there are 31 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.2 out of 5 stars. Read the Islamic poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Mohammad Shafi Uddin Nayyar.