Murshid Saeed Nasir Poetry, Murshid Saeed Nasir Shayari

مرشد سعید ناصر - Murshid Saeed Nasir

1969 رحیم یار خان

مشہور شاعر مرشد سعید ناصر کی شاعری ۔ نظمیں اور غزلیں

مجھے زمیں پہ اتارا گیا تو کیا بنے گا

مرشد سعید ناصر

آج کے خستہ سہاروں میں بڑا دم خم تھا

مرشد سعید ناصر

میں آسماں میں بھٹکتا تھا تم زمیں پر ہو

مرشد سعید ناصر

ہوش کر ذہن سے نکال وجود

مرشد سعید ناصر

وہ دکھے گا ضرور دیکھیں تو

مرشد سعید ناصر

قیس نے کر دیا ہے خالی دشت

مرشد سعید ناصر

فقط نہیں ہے مرے جسم پر لباس عجیب

مرشد سعید ناصر

آپ نے جو منزل کا فاصلہ بدل ڈالا

مرشد سعید ناصر

در کھولا تو گھر غائب ہے

مرشد سعید ناصر

کل بھی پتھر کا، آج پتھر کا

مرشد سعید ناصر

یہ قدم لوٹ نہ پائے برسوں

مرشد سعید ناصر

جب بھی پیشانی مہتاب پہ بل پڑتے ہیں

مرشد سعید ناصر

کس نے پہنی ہوئی ہیں زنجیریں

مرشد سعید ناصر