Fikar Tamear Ashiyaan Bhi Hai

فکر تعمیر آشیاں بھی ہے

فکر تعمیر آشیاں بھی ہے

خوف بے مہری خزاں بھی ہے

خاک بھی اڑ رہی ہے رستوں میں

آمد صبح کا سماں بھی ہے

رنگ بھی اڑ رہا ہے پھولوں کا

غنچہ غنچہ شرر فشاں بھی ہے

اوس بھی ہے کہیں کہیں لرزاں

بزم انجم دھواں دھواں بھی ہے

کچھ تو موسم بھی ہے خیال انگیز

کچھ طبیعت مری رواں بھی ہے

کچھ ترا حسن بھی ہے ہوش ربا

کچھ مری شوخی بیاں بھی ہے

ہر نفس شوق بھی ہے منزل کا

ہر قدم یاد رفتگاں بھی ہے

وجہ تسکیں بھی ہے خیال اس کا

حد سے بڑھ جائے تو گراں بھی ہے

زندگی جس کے دم سے ہے ناصرؔ

یاد اس کی عذاب جاں بھی ہے

ناصر کاظمی

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(362) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Nasir Kazmi, Fikar Tamear Ashiyaan Bhi Hai in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Social Urdu Poetry. Also there are 100 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.6 out of 5 stars. Read the Social poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Nasir Kazmi.