بند کریں
شاعری شہر یار

خموش رہنا ہے اہل درد یوں کب تک

-

khamosh rehna hai ee ehle dard


(251) ووٹ وصول ہوئے