Main Baboolon Ko Kabhi Gul To Nahi Keh Sakta, Urdu Ghazal By Professor Rasheed Hasrat

Main Baboolon Ko Kabhi Gul To Nahi Keh Sakta is a famous Urdu Ghazal written by a famous poet, Professor Rasheed Hasrat. Main Baboolon Ko Kabhi Gul To Nahi Keh Sakta comes under the Sad category of Urdu Ghazal. You can read Main Baboolon Ko Kabhi Gul To Nahi Keh Sakta on this page of UrduPoint.

میں ببولوں کو کبھی گل تو نہیں کہہ سکتا

پروفیسر رشید حسرت

میں ببولوں کو کبھی گل تو نہیں کہہ سکتا

کاگ کو دوستو بلبل تو نہیں کہہ سکتا

وہ رسائی سے مری دور ہؤا جاتا ہے

فاصلے بیچ میں ہیں پُل، تو نہیں کہہ سکتا

کیا برا تھا جو کیا تم نے مفاد اپنا عزیز

کسی صورت مَیں اِسے جل تو نہیں کہہ سکتا

دل کی ہیئت کی بھلا، کیا ہے حقیقت اپنے

ایک ویرانے کو کابُل تو نہیں کہہ سکتا

لوگ کہتے ہیں تو کہتے رہیں ہنگامہ اسے

دل کی دھڑکن کو ابھی غُل تو نہیں کہہ سکتا

ہو سکے جتنا محبت میں نبھائے جاؤ

پر وفاؤں کا اِسے مُل تو نہیں کہہ سکتا

روشنی تھوڑی سی کم ہو تو گئی ہے لیکن

ان چراغوں کو مگر گل تو نہیں کہہ سکتا

یہ الگ بات کہ شادی ہے کسی دل کی موت

خانہ آبادی کو میں قل تو نہیں کہہ سکتا

تم نے تحفے میں تو اولاخ دیا ہے اچھا

ہاں مگر میں اسے دُلدُل تو نہیں کہہ سکتا

کر لیا درد کے ماروں میں رشیدؔ اس کا شمار

برہا کی ماری کو چُل بُل تو نہیں کہہ سکتا

پروفیسر رشید حسرت

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(1139) ووٹ وصول ہوئے

You can read Main Baboolon Ko Kabhi Gul To Nahi Keh Sakta written by Professor Rasheed Hasrat at UrduPoint. Main Baboolon Ko Kabhi Gul To Nahi Keh Sakta is one of the masterpieces written by Professor Rasheed Hasrat. You can also find the complete poetry collection of Professor Rasheed Hasrat by clicking on the button 'Read Complete Poetry Collection of Professor Rasheed Hasrat' above.

Main Baboolon Ko Kabhi Gul To Nahi Keh Sakta is a widely read Urdu Ghazal. If you like Main Baboolon Ko Kabhi Gul To Nahi Keh Sakta, you will also like to read other famous Urdu Ghazal.

You can also read Sad Poetry, If you want to read more poems. We hope you will like the vast collection of poetry at UrduPoint; remember to share it with others.