Kuch Aaise Dil Par War Hue

کچھ ایسے دل پر وار ہوئے

کچھ ایسے دل پر وار ہوئے

سب لفظ تیرے تلوار ہوئے

رہا چوکھٹ پر سناٹا ہی

تیرے وعدے سب بے کار ہوئے

کیا رنج و الم کو یکجا اور

خود اپنے ہم غمخوار ہوئے

کم ظرفوں کو یہاں تخت ملا

اور میر شہر میں خوار ہوئے

سورج نے نکلنا چھوڑ ا تو

پھر شجر بھی سایہ دار ہوئے

نا رہی ضرورت دشمن کی

کچھ ایسے اپنے یار ہوئے

ابھی بھر نا پائے پہلے بھی

اور زخم نئے تیار ہوئے

کچھ وار مخالف کرتے رہے

اور دوست سہولت کار ہوئے

ثناء نقوی

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(2165) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Sana Naqvi, Kuch Aaise Dil Par War Hue in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope Urdu Poetry. Also there are 4 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.4 out of 5 stars. Read the Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Sana Naqvi.