Qasoor Ishq Mein Zahir Hai Sab Hamara Tha

قصور عشق میں ظاہر ہے سب ہمارا تھا

قصور عشق میں ظاہر ہے سب ہمارا تھا

تری نگاہ نے دل کو مگر پکارا تھا

وہ دن بھی کیا تھے کہ ہر بات میں اشارا تھا

دلوں کا راز نگاہوں سے آشکارا تھا

ہوائے شوق نے رنگ حیا نکھارا تھا

چمن چمن لب و رخسار کا نظارا تھا

فریب کھا کے تری شوخیوں سے کیا پوچھیں

حیات و مرگ میں کس کی طرف اشارا تھا

سجود حسن کی تمکیں پہ بار تھا ورنہ

جبین شوق کو یہ ننگ بھی گوارا تھا

چمن میں آگ نہ لگتی تو اور کیا ہوتا

کہ پھول پھول کے دامن میں اک شرارا تھا

تباہیوں کا تو دل کی گلہ نہیں لیکن

کسی غریب کا یہ آخری سہارا تھا

بہت لطیف تھے نظارے حسن برہم کے

مگر نگاہ اٹھانے کا کس کو یارا تھا

یہ کہیے ذوق جنوں کام آ گیا تاباںؔ

نہیں تو رسم و رہ آگہی نے مارا تھا

غلام ربانی تاباںؔ

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(751) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of TABAN GHULAM RABBANI, Qasoor Ishq Mein Zahir Hai Sab Hamara Tha in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Social Urdu Poetry. Also there are 33 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.6 out of 5 stars. Read the Social poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of TABAN GHULAM RABBANI.