Kuch Wardaar Karo

کچھ واردات کرو

دھوپ سے آنکھیں چندھیا سی گئ ہیں

روشنی بجھاؤ , کچھ رات کرو

دو دن کی زندگی میں نفرت کیسی

محبت پھیلاؤ , کچھ بات کرو

خزاں کے موسم سے جی اکتاے ہے

بہار کو لاؤ , کچھ برسات کرو

تن پہ لگا اجڑ ہی جاتا ہے

بھوک مٹاؤ , کچھ خیرات کرو

بات بھلے درمیان سے ہو

دماغ لڑاؤ , ,کچھ شروعات کرو

تغیرِزمانہ بڑھنے کا نام ہے

دو کو چار بناؤ , کچھ سات کرو

یہ کیسی سیدھی زندگی ہے

ہلچل مچاؤ , کچھ خرافات کرو

یہ جداءی سہتے اب کہ زمانے بیتے

سماج سے ٹکراؤ , کچھ ملاقات کرو

جیتی بازی بھی اکثر ہار جاتے ہو

تدبیر لڑاؤ , کچھ مات کرو

آدھی زندگی ہماری صبر میں کٹی

نظر مت چراؤ , کچھ واردات کرو

زینب احمد

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(406) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Poetry of Zainab Ahmad, Kuch Wardaar Karo in Urdu. Also there are 1 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.8 out of 5 stars. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Zainab Ahmad.