بند کریں
شاعری عارف شفیقنوک قلم سے کاٹ رہا ہوں پسپائی اور خوف

(267) ووٹ وصول ہوئے