بند کریں
شاعری ارشد شاہین

بے ثمر التجا کوئی کیسے کرے

-

besamar ilteja koi kaise karee


(235) ووٹ وصول ہوئے