بند کریں
شاعری فراق گورکھپوریدیوان فراقسکھ کو ہنس بیٹھے ،دکھ کو رو بیٹھے

(228) ووٹ وصول ہوئے

: متعلقہ عنوان