بند کریں
شاعری ناصر کاظمی

نہ آنکھیں ہی برسیں نہ تم ہی ملے

-

Na ankheen hi


(337) ووٹ وصول ہوئے

: متعلقہ عنوان