Kiya Kiya Supurd E Khaak Hue Namwar Tamam

کیا کیا سپرد خاک ہوئے نامور تمام

کیا کیا سپرد خاک ہوئے نامور تمام

اک روز سب کو کرنا ہے اپنا سفر تمام

میری نظر نے لوٹ لئے جلوہ ہائے حسن

حسرت سے دیکھتے ہی رہے دیدہ ور تمام

تم نے تو اپنا کہہ کے مجھے لوٹ ہی لیا

ماتم کناں ہے میرے لئے گھر کا گھر تمام

مانا کہ میرے لب نہ ہلے رعب حسن سے

روداد دل تو کہہ ہی گئی چشم تر تمام

اب دیدنی ہے آپ کے بیمار غم کا حال

مایوس آ رہے ہیں نظر چارہ گر تمام

راہ وفا میں حد سے ہم آگے گزر گئے

دو گام چل کے بیٹھ گئے راہبر تمام

چھوڑے ہیں ہم نے نقش محبت ہر اک جگہ

واقف ہمارے حال سے ہیں بام و در تمام

عبدالرحمان خان وصفی بہرائچی

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(270) ووٹ وصول ہوئے

عبدالرحمان خان وصفی بہرائچی کی مزید شاعری

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Abdul Rahman Khan Wasfi Bahraichi, Kiya Kiya Supurd E Khaak Hue Namwar Tamam in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope Urdu Poetry. Also there are 11 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.6 out of 5 stars. Read the Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Abdul Rahman Khan Wasfi Bahraichi.