Na Khudsari Main Haseen Roz O Shab Guzara Kar

نہ خود سری میں حسیں روز و شب گزارا کر

نہ خود سری میں حسیں روز و شب گزارا کر

زمین دل پہ کبھی پاؤں بھی پسارا کر

کنارے لگ گئی میرے بھی شوق کی کشتی

مرے رفیق تو اب شوق سے کنارا کر

کسی کے ہجر میں تصویر بن گیا ہوں میں

حسین شام کے منظر مجھے نہارا کر

یہی ہے لطف انا کا یہی ہے دل داری

کہ بازیوں کو کبھی جیت کے بھی ہارا کر

نکال کوئی تو صورت کہ فاصلے نہ رہیں

قریب آ مرے یا پھر مجھے اشارہ کر

تری صدائیں کبھی رائیگاں نہ جائیں گی

وہ سن رہا ہے یہی سوچ کے پکارا کر

حصول امن و محبت کی چاشنی کے لیے

مزاج تلخیٔ دوراں سخنؔ گوارا کر

عبدالوہاب سخن

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(331) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Abdul Wahab Sukhan, Na Khudsari Main Haseen Roz O Shab Guzara Kar in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope Urdu Poetry. Also there are 26 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.7 out of 5 stars. Read the Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Abdul Wahab Sukhan.