Kamal Hua Hai Qaad Abro K Gosha Geroon Ka

کماں ہوا ہے قد ابرو کے گوشہ گیروں کا

کماں ہوا ہے قد ابرو کے گوشہ گیروں کا

تباہے حال تری زلف کے اسیروں کا

ڈھلے ہے جس پہ دل تس کا کیا ہے ظاہر اسم

وہی ہے وہ کہ جو مرجع ہے ان ضمیروں کا

ہر ایک سبز ہے ہندوستان کا معشوق

بجا ہے نام کہ بالم رکھا ہے کھیروں کا

مرید پیٹ کے کیوں نعرہ زن نہ ہوں ان کا

برا ہے حال کہ لاگا ہے زخم پیروں کا

برہ کی راہ میں جو کوئی گرا سو پھر نہ اٹھا

قدم پھرا نہیں یاں آ کے دست گیروں کا

وہ اور شکل ہے کرتی ہے دل کو جو تسخیر

عبث ہے شیخ ترا نقش یہ لکیروں کا

سیلی میں جوں کہ لٹکا ہو آبروؔ یوں دل

سجن کی زلف میں لٹکا لیا فقیروں کا

نجم الدین شاہ مبارک

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(263) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Abroo Shah Mubarak, Kamal Hua Hai Qaad Abro K Gosha Geroon Ka in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope Urdu Poetry. Also there are 45 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.5 out of 5 stars. Read the Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Abroo Shah Mubarak.