Nah Seh Saka Jab Musafaton Ke Azab Saray

نہ سہہ سکا جب مسافتوں کے عذاب سارے

نہ سہہ سکا جب مسافتوں کے عذاب سارے

تو کر گئے کوچ میری آنکھوں سے خواب سارے

بیاض دل پر غزل کی صورت رقم کیے ہیں

ترے کرم بھی ترے ستم بھی حساب سارے

بہار آئی ہے تم بھی آؤ ادھر سے گزرو

کہ دیکھنا چاہتے ہیں تم کو گلاب سارے

یہ سانحہ ہے کہ واعظوں سے الجھ پڑے ہم

یہ واقعہ ہے کہ پی رہے تھے شراب سارے

بھلا ہوا ہم گناہ گاروں نے ضد نہیں کی

سمیٹ کر لے گیا ہے ناصح ثواب سارے

فرازؔ کس نے مرے مقدر میں لکھ دیے ہیں

بس ایک دریا کی دوستی میں سراب سارے

احمد فراز

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(3434) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Ahmed Faraz, Nah Seh Saka Jab Musafaton Ke Azab Saray in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Sad Urdu Poetry. Also there are 154 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.4 out of 5 stars. Read the Sad poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Ahmed Faraz.