Kaisay Samjhao Nasem Subah Tujh Ko Kya Hon Main

کیسے سمجھاؤں نسیم صبح تجھ کو کیا ہوں میں

کیسے سمجھاؤں نسیم صبح تجھ کو کیا ہوں میں

پھول کے سائے میں مرجھایا ہوا پتا ہوں میں

خاک کا ذرہ بھی کوئی تیرے دامن میں نہ تھا

قدر کر اے زندگی ٹوٹا ہوا تارا ہوں میں

ہر دھڑکتے دل سے انجانا سا رشتہ ہے مرا

آگ دامن میں کسی کے بھی لگے جلتا ہوں میں

اپنی تاریکی سمیٹے پوچھتی ہے مجھ سے رات

کون سی ہے صبح جس کو ڈھونڈھنے نکلا ہوں میں

مجھ کو سمجھائے تو کوئی رازدار کائنات

مجھ میں ہے آباد یہ دنیا کہ خود اپنا ہوں میں

زندگی ٹوٹے ہوئے خوابوں میں گزری ہے تو کیا!

آج بھی اک خواب آنکھوں میں لیے بیٹھا ہوں میں

سمت منزل ہی بدل جائے تو میرا کیا قصور

راستوں سے پوچھ کر دیکھو کہیں ٹھہرا ہوں میں

دیر تک حسرت سے دیکھے گی اسے شام سفر

جس زمیں پر نقش اپنے چھوڑ کر گزرا ہوں میں

چپکے چپکے رات بھر کہتا ہے اخترؔ مجھ سے دل

بستیاں آباد ہیں مجھ سے مگر صحرا ہوں میں

اختر سعید خان

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(359) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Akhtar Saeed Khan, Kaisay Samjhao Nasem Subah Tujh Ko Kya Hon Main in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Social Urdu Poetry. Also there are 51 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.1 out of 5 stars. Read the Social poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Akhtar Saeed Khan.