Zara Si Dhoop Zara Si Nami Ke Anay Se

ذرا سی دھوپ ذرا سی نمی کے آنے سے

ذرا سی دھوپ ذرا سی نمی کے آنے سے

میں جی اٹھا ہوں ذرا تازگی کے آنے سے

اداس ہو گئے اک پل میں شادماں چہرے

مرے لبوں پہ ذرا سی ہنسی کے آنے سے

دکھوں کے یار بچھڑنے لگے ہیں اب مجھ سے

یہ سانحہ بھی ہوا ہے خوشی کے آنے سے

کرخت ہونے لگے ہیں بجھے ہوئے لہجے

مرے مزاج میں شائستگی کے آنے سے

بہت سکون سے رہتے تھے ہم اندھیرے میں

فساد پیدا ہوا روشنی کے آنے سے

یقین ہوتا نہیں شہر دل اچانک یوں

بدل گیا ہے کسی اجنبی کے آنے سے

میں روتے روتے اچانک ہی ہنس پڑا عالمؔ

تماش بینوں میں سنجیدگی کے آنے سے

عالم خورشید

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(1304) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Alam Khurshid, Zara Si Dhoop Zara Si Nami Ke Anay Se in Urdu. This famous Urdu Shayari is a , and the type of this Nazam is Urdu Poetry. Also there are 71 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.4 out of 5 stars. Read the poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Alam Khurshid.