Main Kiya Orhoon

میں کیا اوڑھوں؟

تم نے کیا پہنا ہوا ہے؟

اک بساند بھراقہقہہ؟

مت ہنسو

اجنبی قہقہے کراہنے لگتے ہیں

اس میں ایک کھوکھلے قہقہے کا سر

سب سے اونچا ہے

ارادتا"لڑھکائے ہوئے قہقہے

سماعت کا راستہ نہیں بھولے

مگر بھول گئے ہیں

پچھلے برس

یا اس سے پچھلے برس۔۔۔

یاد نہیں کیا تھا

بس ایک ہیولی'

تھرتھراتا رہتا ہے

جاگتے رہتے ہیں ہونٹ

نہیں جاگتی مسکراہٹ

چھوٹی چھوٹی باتوں میں

کیا رکھا ہے؟

خوابوں کی کھرچن

ناخنوں میں پھانس بن کر چبھنے لگے

تو نیند کا ذائقہ بھول جاتا ہے

نیند میں دیکھے ہوئے خواب

ہر روز تکرار نہیں کرتے

کھلی آنکھ میں خواب دھرے رہو

اور کچھ مت دیکھو

سامنے کیا ہے؟

اردگرد کی دیواروں کا

اندازہ نہیں کیا جاسکتا

جب تک ان کے درمیان کے راستے پر

بار بار پاوں نہ دھرے جائیں

اندر کی آوازوں کو دبانے کے لیے

رات کی کھڑکی سے باہر

خلا میں قدم رکھ کر

ساکت کھڑے رہنا پڑتا ہے

تمھاری طرح۔۔۔!

تم جو چاہو کر سکتے ہو

تم جلتا دن اوڑھ سکتے ہو

میں کیا اوڑھوں ؟

عارفہ شہزاد

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(516) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Arifa Shahzad, Main Kiya Orhoon in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Nazam, and the type of this Nazam is Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope Urdu Poetry. Also there are 63 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.3 out of 5 stars. Read the Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Arifa Shahzad.