Rukte Hue Qadmoon Ka Chalan Mere Liye Hai

رکتے ہوئے قدموں کا چلن میرے لیے ہے

رکتے ہوئے قدموں کا چلن میرے لیے ہے

سیارۂ حیرت کی تھکن میرے لیے ہے

کوئی مرا آہو مجھے لا کر نہیں دیتا

کہتے تو سبھی ہیں کہ ختن میرے لیے ہے

تپ سی مجھے آ جاتی ہے آغوش میں اس کی

وہ برف کے گالے سا بدن میرے لیے ہے

ہیں جوئے تب و تاب پہ انوار کے پیاسے

اور شام کا یہ سانولا پن میرے لیے ہے

قندھار نہ کابل نہ یمن میرے لیے ہے

مٹی کے اجڑنے کی چبھن میرے لیے ہے

باروت میں بھنتے ہوئے الفاظ و مفاہیم

اب تو یہی تصویر سخن میرے لیے ہے

دنیا ہی نہیں خود سے خفا رہتا ہوں ارشدؔ

جینے کا یہ انداز ہی فن میرے لیے ہے

ارشد عبدالحمید

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(425) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Arshad Abdul Hamid, Rukte Hue Qadmoon Ka Chalan Mere Liye Hai in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken Urdu Poetry. Also there are 37 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.7 out of 5 stars. Read the Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Arshad Abdul Hamid.