Tabeer Is Ki Kya Hai Dhuwan Daikhta Hon Mein

تعبیر اس کی کیا ہے دھواں دیکھتا ہوں میں

تعبیر اس کی کیا ہے دھواں دیکھتا ہوں میں

اک دریا کچھ دنوں سے رواں دیکھتا ہوں میں

اب کے بھی رائیگاں گئیں صحرا نوردیاں

پھر تیری رہ گزر کے نشاں دیکھتا ہوں میں

یہ سچ ہے ایک جست میں ہے فاصلہ تمام

لیکن ادھر بھی شہر گماں دیکھتا ہوں میں

ہے روشنی ہی روشنی منظر نہیں کوئی

سورج لٹک رہے ہیں جہاں دیکھتا ہوں میں

آیا جو اس حصار میں نکلا نہ پھر کبھی

کچھ ڈوبتے ابھرتے مکاں دیکھتا ہوں میں

کھائے گی اب کے بار بھی آشفتگی فریب

صید طلسم شعلہ رخاں دیکھتا ہوں میں

آشفتہ چنگیزی

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(210) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Ashufta Changezi, Tabeer Is Ki Kya Hai Dhuwan Daikhta Hon Mein in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Social Urdu Poetry. Also there are 55 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.6 out of 5 stars. Read the Social poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Ashufta Changezi.