Social Poetry of Ashufta Changezi - Social Shayari

آشفتہ چنگیزی کی معاشرتی شاعری

سوال کرتی کئی آنکھیں منتظر ہیں یہاں

Sawal Karti Kayi Ankhen Muntazir Hain Yahan

(Ashufta Changezi) آشفتہ چنگیزی

سفر تو پہلے بھی کتنے کیے مگر اس بار

Safar To Pehlay Bhi Kitney Kiye Magar Is Baar

(Ashufta Changezi) آشفتہ چنگیزی

سبھی کو اپنا سمجھتا ہوں کیا ہوا ہے مجھے

Sabhi Ko Apna Samjhta Hon Kya Howa Hai Mujhe

(Ashufta Changezi) آشفتہ چنگیزی

دل دیتا ہے ہر پھر کے اسی در پہ صدائیں

Dil Deta Hai Har Phir Ke Isi Dar Pay Sadayen

(Ashufta Changezi) آشفتہ چنگیزی

دریاؤں کی نذر ہوئے

Daryaaon Ki Nazar Hue

(Ashufta Changezi) آشفتہ چنگیزی

تو کبھی اس شہر سے ہو کر گزر

To Kabhi Is Shehar Se Ho Kar Guzar

(Ashufta Changezi) آشفتہ چنگیزی

تلاش جن کو ہمیشہ بزرگ کرتے رہے

Talaash Jin Ko Hamesha Buzurag Karte Rahay

(Ashufta Changezi) آشفتہ چنگیزی

تجھ کو بھی کیوں یاد رکھا

Tujh Ko Bhi Kyun Yaad Rakha

(Ashufta Changezi) آشفتہ چنگیزی

سارے دن کی تھکی،

Saaray Din Ki Thaki ,

(Ashufta Changezi) آشفتہ چنگیزی

ٹھکانے یوں تو ہزاروں ترے جہان میں تھے

Thikanay Yun To Hazaron Tre Jahan Mein Thay

(Ashufta Changezi) آشفتہ چنگیزی

تم نے لکھا ہے لکھو کیسا ہوں میں

Tum Ne Likha Hai Likho Kaisa Hon Mein

(Ashufta Changezi) آشفتہ چنگیزی

یہ بھی نہیں بیمار نہ تھے

Yeh Bhi Nahi Bemar Nah Thay

(Ashufta Changezi) آشفتہ چنگیزی

صدائیں قید کروں آہٹیں چرا لے جاؤں

Sadayen Qaid Karoon Ahhtain Chura Le Jaoon

(Ashufta Changezi) آشفتہ چنگیزی

سلسلہ اب بھی خوابوں کا ٹوٹا نہیں

Silsila Ab Bhi Khowaboon Ka Toota Nahi

(Ashufta Changezi) آشفتہ چنگیزی

تعبیر اس کی کیا ہے دھواں دیکھتا ہوں میں

Tabeer Is Ki Kya Hai Dhuwan Daikhta Hon Mein

(Ashufta Changezi) آشفتہ چنگیزی

صدائیں قید کروں آہٹیں چرا لے جاؤں

Sadayen Qaid Karoon Ahhtain Chura Le Jaoon

(Ashufta Changezi) آشفتہ چنگیزی

سلسلہ اب بھی خوابوں کا ٹوٹا نہیں

Silsila Ab Bhi Khowaboon Ka Toota Nahi

(Ashufta Changezi) آشفتہ چنگیزی

تعبیر اس کی کیا ہے دھواں دیکھتا ہوں میں

Tabeer Is Ki Kya Hai Dhuwan Daikhta Hon Mein

(Ashufta Changezi) آشفتہ چنگیزی

پناہیں ڈھونڈ کے کتنی ہی روز لاتا ہے

Panahein Dhoond Ke Kitni Hi Roz Lata Hai

(Ashufta Changezi) آشفتہ چنگیزی

رونے کو بہت روئے بہت آہ و فغاں کی

Ronay Ko Bohat Roye Bohat Aah O Fghan Ki

(Ashufta Changezi) آشفتہ چنگیزی

سبھی کو اپنا سمجھتا ہوں کیا ہوا ہے مجھے

Sabhi Ko Apna Samjhta Hon Kya Howa Hai Mujhay

(Ashufta Changezi) آشفتہ چنگیزی

کس کی تلاش ہے ہمیں کس کے اثر میں ہیں

Kis Ki Talaash Hai Hamein Kis Ke Assar Mein Hain

(Ashufta Changezi) آشفتہ چنگیزی

کسے بتاتے کہ منظر نگاہ میں کیا تھا

Kisay Batatay Ke Manzar Nigah Mein Kya Tha

(Ashufta Changezi) آشفتہ چنگیزی

جس کی نہ کوئی رات ہو ایسی سحر ملے

Jis Ki Nah Koi Raat Ho Aisi Sehar Miley

(Ashufta Changezi) آشفتہ چنگیزی

Records 1 To 24 (Total 56 Records)

Social Shayari of Ashufta Changezi - Poetry of Social. Read the best collection of Social poetry by Ashufta Changezi, Read the famous Social poetry, and Social Shayari by the poet. Social Nazam and Social Ghazals of the poet. The best collection of Shayari by Ashufta Changezi online. You can also read different types of poetries by the poet including Social Shayari from different books of the poet.