Ghazlon Ka Hunar Apni Aankhon Ko Sekhiye Gay

غزلوں کا ہنر اپنی آنکھوں کو سکھائیں گے

غزلوں کا ہنر اپنی آنکھوں کو سکھائیں گے

روئیں گے بہت لیکن آنسو نہیں آئیں گے

کہہ دینا سمندر سے ہم اوس کے موتی ہیں

دریا کی طرح تجھ سے ملنے نہیں آئیں گے

وہ دھوپ کے چھپر ہوں یا چھاؤں کی دیواریں

اب جو بھی اٹھائیں گے مل جل کے اٹھائیں گے

جب ساتھ نہ دے کوئی آواز ہمیں دینا

ہم پھول سہی لیکن پتھر بھی اٹھائیں گے

بشیر بدر

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(329) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Bashir Badr, Ghazlon Ka Hunar Apni Aankhon Ko Sekhiye Gay in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Social Urdu Poetry. Also there are 75 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.7 out of 5 stars. Read the Social poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Bashir Badr.