Musafir Ke Rastay Bdalty Rahay

مسافر کے رستے بدلتے رہے

مسافر کے رستے بدلتے رہے

مقدر میں چلنا تھا چلتے رہے

مرے راستوں میں اجالا رہا

دیئے اس کی آنکھوں میں جلتے رہے

کوئی پھول سا ہاتھ کاندھے پہ تھا

مرے پاؤں شعلوں پہ جلتے رہے

سنا ہے انہیں بھی ہوا لگ گئی

ہواؤں کے جو رخ بدلتے رہے

وہ کیا تھا جسے ہم نے ٹھکرا دیا

مگر عمر بھر ہاتھ ملتے رہے

محبت عداوت وفا بے رخی

کرائے کے گھر تھے بدلتے رہے

لپٹ کر چراغوں سے وہ سو گئے

جو پھولوں پہ کروٹ بدلتے رہے

بشیر بدر

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(473) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Bashir Badr, Musafir Ke Rastay Bdalty Rahay in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Sad, Social Urdu Poetry. Also there are 75 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.1 out of 5 stars. Read the Sad, Social poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Bashir Badr.