Meri Khizaan Tu Sabz Hui Iss Khumar Main

میری خزاں تو سبز ہوئی اس خمار میں

میری خزاں تو سبز ہوئی اس خمار میں

آنے کا اس نے وعدہ کیا ہے بہار میں

رکھی ہوئی ہے لاج مری میرے عشق نے

ورنہ تو کیا رکھا ہوا ہے انتظار میں

گھر بھی مجھے تو دشت سا لگتا ہے تیرے بن

لگتا نہیں ہے دل مرا اجڑے دیار میں

اب جو سلوک تو کرے یہ ظرف ہے ترا

میں آ گئی ہوں آج ترے اختیار میں

روشن نہ ہو سکی کبھی یہ شام غم مری

میں نے جلائے دیپ کئی اعتبار میں

میری وفا کے ذکر پہ اس کی وہ خامشی

سارے جواب مل گئے اس اختصار میں

دیکھی تو ہوگی راہ مری اس نے بھی کبھی

آیا بھی ہوگا اشک مرے چشم یار میں

دیکھا ہے میں نے معجزہ دلشادؔ ایسا بھی

ہنسنے سے اس کے گل کھلے ہیں کنج خار میں

دلشاد نسیم

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(647) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Dilshad Naseem, Meri Khizaan Tu Sabz Hui Iss Khumar Main in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope Urdu Poetry. Also there are 18 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.2 out of 5 stars. Read the Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Dilshad Naseem.