Agar Muhabbat Ke Mudai Ho To Yeh Rawayya Rava Nahi Hai

اگر محبت کے مدعی ہو تو یہ رویہ روا نہیں ہے

اگر محبت کے مدعی ہو تو یہ رویہ روا نہیں ہے

جو شکوہ ہے روبرو نہیں ہے جو بات ہے برملا نہیں ہے

یہ روز تجدید عہد الفت یہ روز پیمان دل نوازی

ہزار تسلیم کر رہا ہوں مگر یقین وفا نہیں ہے

ہے تیرے کافر شباب سے خوب میری معصوم مے گساری

سرور کی ایک حد ہے قائم غرور کی انتہا نہیں ہے

عجب نہیں زحمت وفا سے مجھے کسی دن نجات دے دے

یہی مری بے زباں محبت جو در خور اعتنا نہیں ہے

نہ جانے کس کس سے دل لگا کر وفا سے مایوس ہو چکا ہوں

نظر پریشان شش جہت ہے کوئی بھی درد آشنا نہیں ہے

جتا کے مجبوریٔ محبت امید مہر و وفا کے معنی

میں خود ہوں اپنا سکون دشمن کسی کی کوئی خطا نہیں ہے

بجا بجا بے شمار عارض نظر نظر کو ترس رہے ہیں

مگر یہ دل کا معاملہ ہے نگاہ کا واسطہ نہیں ہے

احسان دانش

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(1821) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Ehsan Danish, Agar Muhabbat Ke Mudai Ho To Yeh Rawayya Rava Nahi Hai in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Love, Social Urdu Poetry. Also there are 66 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.8 out of 5 stars. Read the Love, Social poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Ehsan Danish.