Jis Din Se Koi Khwahish E Dunya NahiN Rakhta

جس دن سے کوئی خواہش دنیا نہیں رکھتا

جس دن سے کوئی خواہش دنیا نہیں رکھتا

میں دل میں کسی بات کا کھٹکا نہیں رکھتا

مجھ میں ہے یہی عیب کہ اوروں کی طرح میں

چہرے پہ کبھی دوسرا چہرا نہیں رکھتا

کیوں قتل مجھے کر کے ڈبوتے ہو ندی میں

دو دن بھی کسی لاش کو دریا نہیں رکھتا

کیوں مجھ کو لہو دینے پہ تم لوگ بہ ضد ہو

میں سر پہ کسی شخص کا قرضا نہیں رکھتا

احباب تو احباب ہیں دشمن کے تئیں بھی

کم ظرف زمانے کا رویہ نہیں رکھتا

یہ سچ ہے کہ میں غالبؔ ثانی نہیں لیکن

یاران معاصر کا بھی لہجہ نہیں رکھتا

بادل تو فراغؔ اصل میں ہوتا ہے وہ بادل

جو پیاس کے صحرا کو بھی پیاسا نہیں رکھتا

فراغ روہوی

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(1396) ووٹ وصول ہوئے

متعلقہ شاعری

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Faragh Rohvi, Jis Din Se Koi Khwahish E Dunya NahiN Rakhta in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Sad, Social Urdu Poetry. Also there are 16 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.1 out of 5 stars. Read the Sad, Social poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Faragh Rohvi.