Yeh FurqatoN MeiN Lamha E Visal Kaesay Aa Gaya

یہ فرقتوں میں لمحۂ وصال کیسے آ گیا

یہ فرقتوں میں لمحۂ وصال کیسے آ گیا

محبتوں میں پھر نیا ابال کیسے آ گیا

جسے جہاں کے مشغلوں میں اپنا ہوش بھی نہ تھا

اچانک آج اسے مرا خیال کیسے آ گیا

ابھی تلک تو میرے سارے زخم تھے ہرے بھرے

یکایک ان کو کار اندمال کیسے آ گیا

جدائی کا بس ایک پل گراں تھا زندگی پہ جب

تو درمیان بحر ماہ و سال کیسے آ گیا

ابھی تلک تھیں وقت کی طنابیں اس کے ہاتھ میں؂

عدم فراغتوں کا پھر سوال کیسے آ گیا

مرے ذرا سے درد پر تڑپ تھی جس کی دیدنی

اسے ستم گری کا یہ کمال کیسے آ گیا

ندیمؔ اپنی چاہتوں پہ ناز تھا تمہیں بہت

تو پھر تمہارے عشق پر زوال کیسے آ گیا

فرحت ندیم ہمایوں

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(1516) ووٹ وصول ہوئے

متعلقہ شاعری

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Farhat Nadeem HumayuN, Yeh FurqatoN MeiN Lamha E Visal Kaesay Aa Gaya in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Love, Sad, Social Urdu Poetry. Also there are 12 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.6 out of 5 stars. Read the Love, Sad, Social poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Farhat Nadeem HumayuN.