Tumhare Pehlu Main Zindagi Ne Ju Saans Li Thi Wo Mar Chuki Hai

تمہارے پہلو میں زندگی نے جو سانس لی تھی وہ مر چکی ہے

تمہارے پہلو میں زندگی نے جو سانس لی تھی وہ مر چکی ہے

جو دشت میں میری ہمسفر تھی وہ ریت آنکھوں میں بھر چکی ہے

وہ کس پیمبر کی جستجو میں ہزار راتوں سے جاگتے ہیں

کوئی تو بتلائے راہبوں کو شب ِ ستارہ گزر چکی ہے

میں کہکشاؤں کا ہمسفر ہوں میں چاند تاروں کا راہبر ہوں

مرے تخیّل کی طشتری تو مریخ پر بھی اُتر چکی ہے

اناج لے کر دعائیں دینے اب آ رہے ہو فقیر بابا !!

ہماری بستی جب اپنا مال و منال پانی پہ دھر چکی ہے

جو بربریّت کے مرتکب ہیں، زمیں پہ اب بھی وہ محتسِب ہیں

خدا کے آگے فلک پہ خلقت کی آہ ماتم بھی کر چکی ہے

میں کیا بتاؤں کہ کیسا مرد ِ عمَل ہے مدفَن میں دَفن واصف

لحَد کے رُخ پر وہ دیکھ مَیَّت کی اپنی صُورت اُبھر چکی ہے

جبار واصف

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(1416) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Jabbar Wasif, Tumhare Pehlu Main Zindagi Ne Ju Saans Li Thi Wo Mar Chuki Hai in Urdu. This famous Urdu Shayari is a , and the type of this Nazam is Urdu Poetry. Also there are 30 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 5 out of 5 stars. Read the poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Jabbar Wasif.