Numaya Manthay Saey Piham Hoti Jati Hai

نمایاں منتہائے سعئ پیہم ہوتی جاتی ہے

نمایاں منتہائے سعئ پیہم ہوتی جاتی ہے

طبیعت بے نیاز ہر دو عالم ہوتی جاتی ہے

اٹھی جاتی ہے دل سے ہیبت آلام روحانی

جراحت بہر قلب زار مرہم ہوتی جاتی ہے

کنارا کر رہا ہے روح سے ہیجان سرتابی

کہ گردن جستجو کے شوق میں خم ہوتی جاتی ہے

جنوں کا چھا رہا ہے زندگی پر اک دھندلکا سا

خرد کی روشنی سینے میں مدھم ہوتی جاتی ہے

نسیم بے نیازی آ رہی ہے بام گردوں سے

عروس مدعا کی زلف برہم ہوتی جاتی ہے

نمایاں ہو چلا ہے اک جہاں چشم تصور پر

نظر شاید حریف ساغر جم ہوتی جاتی ہے

گرہ یوں کھل رہی ہے ہر نفس ذوق تماشا کی

کہ ہر ادنیٰ سی شے اب ایک عالم ہوتی جاتی ہے

فضا میں کانپتی ہیں دھندلی دھندلی نقرئی شکلیں

ہر اک تخیئل پاکیزہ مجسم ہوتی جاتی ہے

نہ جانے سینۂ احساس پر یہ ہات ہے کس کا

طبیعت بے نیاز شادی و غم ہوتی جاتی ہے

سمجھ میں آئیں کیا باریکیاں قانون قدرت کی

عبادت کثرت معنی سے مبہم ہوتی جاتی ہے

خجل تھا جس کی شورش سے تلاطم بحر ہستی کا

مرے دل میں وہ ہلچل جوشؔ اب کم ہوتی جاتی ہے

جوش ملیح آبادی

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(983) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Josh Malihabadi, Numaya Manthay Saey Piham Hoti Jati Hai in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Social Urdu Poetry. Also there are 51 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.9 out of 5 stars. Read the Social poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Josh Malihabadi.