Itna Bhi Kaam Saada Dilli Se Nahi Kiya

اتنا بھی کام سادہ دلی سے نہیں کیا

اتنا بھی کام سادہ دلی سے نہیں کیا

ہم نے سوالِ وصل پری سے نہیں کیا

وہ جبرِ انبساط تھا اس دل پہ دوستو

ہنسنے کا فیصلہ بھی خوشی سے نہیں کیا

بولا کبھی جو جھوٹ تو بولا کہ جھوٹ ہے

دھوکہ بھی ہم نے دھوکہ دہی سے نہیں کیا

ہم ہار کے بھی آئے تو اِقرار کر لیا

ہم نے کوئی بہانہ کسی سے نہیں کیا

بچپن سے کر رہے ہیں بڑے ذوق شوق سے

ہم نے تباہ خود کو ابھی سے نہیں کیا

انجام میرا تیرہ شبی ہے یہ ٹھیک ہے

آغاز میں نے تیرہ شبی سے نہیں کیا

اخترؔ بلا وجہ ہی چمکنے لگے ہو تم

اُس نے تمھارا ذکر کسی سے نہیں کیا

جنید اختر

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(639) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Junaid Akhter, Itna Bhi Kaam Saada Dilli Se Nahi Kiya in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope Urdu Poetry. Also there are 41 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.8 out of 5 stars. Read the Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Junaid Akhter.