Kahan Sanbhalte Hain Behte Hue Bahao Main Loog

کہاں سنبھلتے ہیں بہتے ہوئے بہاؤ میں لوگ

کہاں سنبھلتے ہیں بہتے ہوئے بہاؤ میں لوگ

مگر جو زخم اٹھائیں گے اس چناؤ میں لوگ

تمہارے نیم تبسم سے صاف ظاہر ہے

ہم ایسے مار دیے جائیں رکھ رکھاؤ میں لوگ

یہ میرے حق میں لگاتار بولتے ہوئے اب

کسی نتیجے پہ پہنچے ترے دباؤ میں لوگ

دہک رہا ہے ابھی سے رخ زیاں کاری

سفر کا جائزہ لیں گے کسی پڑاؤ میں لوگ

کہانی جب کہیں دھندلا کے نقش کھونے لگے

سراپا دیکھ لیا کرتے ہیں الاؤ میں لوگ

تو اپنے وقت کا یوسف ہے اور سر بازار

تجھے گنوا ہی نہ دیں ایسے بھاؤ تاؤ میں لوگ

خمار میرزادہ

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(810) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Khumar Mirzada, Kahan Sanbhalte Hain Behte Hue Bahao Main Loog in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope Urdu Poetry. Also there are 17 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 5 out of 5 stars. Read the Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Khumar Mirzada.