Aik Main Aur Itnay Lakhoon Silsiloon Ke Samnay

ایک میں اور اتنے لاکھوں سلسلوں کے سامنے

ایک میں اور اتنے لاکھوں سلسلوں کے سامنے

ایک صوت گنگ جیسے گنبدوں کے سامنے

مٹتے جاتے نقش دود دم کی آمد رفت سے

کھلتے جاتے بے صدا لب آئنوں کے سامنے

ہے ہوائے سیر آب اور اجنبی سی سر زمیں

اڑ رہی ہے خاک کہنہ ساحلوں کے سامنے

آگ جلتی ہے گھروں میں یا کوئی تصویر ہے

یادگار جرم آدم خاکیوں کے سامنے

دشمنی رسم جہاں ہے دوستی حرف غلط

آدمی تنہا کھڑا ہے ظالموں کے سامنے

چار چپ چیزیں ہیں بحر و بر فلک اور کوہسار

دل دہل جاتا ہے ان خالی جگہوں کے سامنے

باطن زردار پر اسرار ہے جیسے منیرؔ

کان زر کی بند ہیبت مشعلوں کے سامنے

منیر نیازی

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(6700) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Munir Niazi, Aik Main Aur Itnay Lakhoon Silsiloon Ke Samnay in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Sad, Social Urdu Poetry. Also there are 130 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.8 out of 5 stars. Read the Sad, Social poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Munir Niazi.