Darya Ho Ya Pahar Ho Takrana Chahiye

دریا ہو یا پہاڑ ہو ٹکرانا چاہئے

دریا ہو یا پہاڑ ہو ٹکرانا چاہئے

جب تک نہ سانس ٹوٹے جیے جانا چاہئے

یوں تو قدم قدم پہ ہے دیوار سامنے

کوئی نہ ہو تو خود سے الجھ جانا چاہئے

جھکتی ہوئی نظر ہو کہ سمٹا ہوا بدن

ہر رس بھری گھٹا کو برس جانا چاہئے

چوراہے باغ بلڈنگیں سب شہر تو نہیں

کچھ ایسے ویسے لوگوں سے یارانا چاہئے

اپنی تلاش اپنی نظر اپنا تجربہ

رستہ ہو چاہے صاف بھٹک جانا چاہئے

چپ چپ مکان راستے گم سم نڈھال وقت

اس شہر کے لیے کوئی دیوانا چاہئے

بجلی کا قمقمہ نہ ہو کالا دھواں تو ہو

یہ بھی اگر نہیں ہو تو بجھ جانا چاہئے

ندا فاضلی

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(369) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Nida Fazli, Darya Ho Ya Pahar Ho Takrana Chahiye in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Sad Urdu Poetry. Also there are 158 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.9 out of 5 stars. Read the Sad poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Nida Fazli.