بند کریں
شاعری فراق گورکھپوری

سر میں سودا بھی نہیں دل میں تمنا بھی نہیں

-

sar maiN saoda bhi nahi dl maiN tamanna bhi nahi


(3) ووٹ وصول ہوئے

: متعلقہ عنوان