Raste Rooth Jate Hain

رستے روٹھ جاتے ہیں

اگر پامال راہوں پر قدم رکھنے کی عادت ختم ہو جائے

مشامِ جاں میں خوشبو کی بجائے درد در آئے

وصال آمادہ شہ راہوں پہ فرقت کا بسیرا ہو

اک ایسا وقت آ جائے

جو تیرا ہو نہ میرا ہو

محبت کی سنہری جھیل پرغم کی گھنیری رات چھائی ہو

کناروں پر فقط نم دیدہ تنہائی کی کائی ہو

چمکتے پانیوں پر تھرتھراتے عکس کھو جائیں

روپہلی دھوپ میں سرسبز پگڈنڈی اچانک زرد پڑ جائے

سمندر کی نمیدہ ریت پر نقشِ قدم لہریں نگل جائیں

وہ آنکھیں جن میں ست رنگے سجیلے خواب رہتے ہوں

وہاں آسیب بس جائے

جو دونوں سمت سے سایہ فگن پیڑوں تلےبھی چلچلاتی دھوپ پھیلی ہو

جہاں ہر روز جانا ہو

وہاں پر گھاس اگ آئے

تو رستے روٹھ جاتے ہیں

سلمان باسط

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(530) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Salman Basit, Raste Rooth Jate Hain in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Nazam, and the type of this Nazam is Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope Urdu Poetry. Also there are 27 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.2 out of 5 stars. Read the Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Salman Basit.