Ajnabi Sheher Main Ulfat Ki Nazar Ko Tarse

اجنبی شہر میں الفت کی نظر کو ترسے

اجنبی شہر میں الفت کی نظر کو ترسے

شام ڈھل جائے تو رہ گیر بھی گھر کو ترسے

خالی جھولی لیے پھرتا ہے جو ایوانوں میں

میرا شفاف ہنر عرض ہنر کو ترسے

جس جگہ ہم نے جلائے تھے وفاؤں کے دیئے

پھر اسی گاہ پہ دل دار نظر کو ترسے

میری بے خواب نگاہیں ہیں سمندر شب ہے

وقت تھم تھم کے جو گزرے ہے سحر کو ترسے

جانے ہم کس سے مخاطب ہیں بھری محفل میں

بات دل میں جو نہ اترے ہے اثر کو ترسے

کتنے موسم ہیں کہ چپ چاپ گزر جاتے ہیں

تیرے آنے کا دلاسہ ہے خبر کو ترسے

شبنمی راکھ بچھی ہے مرے ارمانوں کی

نقش پا تیرے کسی خاک بسر کو ترسے

شائستہ مفتی

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(1029) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Shaista Mufti, Ajnabi Sheher Main Ulfat Ki Nazar Ko Tarse in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope Urdu Poetry. Also there are 14 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.3 out of 5 stars. Read the Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Shaista Mufti.