Kuch Dinon Se Jo Tabiyat Meri Yaksu Kam Hai

کچھ دنوں سے جو طبیعت مری یکسو کم ہے

کچھ دنوں سے جو طبیعت مری یکسو کم ہے

دل ہے بھر پور مگر آنکھ میں آنسو کم ہے

تجھے گھیرے میں لیے رکھتے ہیں کچھ اور ہی لوگ

یعنی تیرے لیے یہ حلقۂ بازو کم ہے

توڑ جیسے ہے کوئی اپنے ہی اندر اس کا

ورنہ ایسا بھی نہیں ہے ترا جادو کم ہے

میں ان آفات سماوی پہ کروں کیوں تکیہ

کیا مری ساری تباہی کے لیے تو کم ہے

رنگ موسم ہی محبت کا دیا جس نے بگاڑ

شہر بھر کے لیے کیا ایک ہی بد خو کم ہے

پیڑ کی چھانو پہ کرتی ہے قناعت کیوں خلق

اور کیوں سب کے لیے سایۂ گیسو کم ہے

زندگی ہے وہی صد رنگ مرے چاروں طرف

کچھ دنوں سے مگر اس کا کوئی پہلو کم ہے

وہ بھی جانے سے ہوا پھرتا ہے باہر اور کچھ

دل پہ اپنا بھی کئی روز سے قابو کم ہے

شاعری چھوڑ بھی سکتا نہیں میں ورنہ ظفرؔ

جانتا ہوں اس اندھیرے میں یہ جگنو کم ہے

ظفر اقبال

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(1619) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Zafar Iqbal, Kuch Dinon Se Jo Tabiyat Meri Yaksu Kam Hai in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Social Urdu Poetry. Also there are 105 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.9 out of 5 stars. Read the Social poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Zafar Iqbal.