بند کریں
شاعری حبیب جالبجی دیکھا ہے مردیکھا ہے

(344) ووٹ وصول ہوئے