بند کریں
شاعری قمر رضا شہزادجو رازداں تھی رازداں نہیں رہی

(266) ووٹ وصول ہوئے