Itna Hi Buhat Hai K Yeh Barood Hai Mujh Main

اتنا ہی بہت ہے کہ یہ بارود ہے مجھ میں

اتنا ہی بہت ہے کہ یہ بارود ہے مجھ میں

انگارہ نما شخص بھی موجود ہے مجھ میں

پوروں سے نکل آئی ہے اک برف کی ٹہنی

اے دوست یہی آتش نمرود ہے مجھ میں

ہر گیند کے پیچھے کوئی آتا ہے ہمیشہ

یہ کون سے بچے کی اچھل کود ہے مجھ میں

گالی نہیں اچھی تو تمہیں پیش کروں کیا

اک اور بھی جملہ سخن آلود ہے مجھ میں

میں دیکھتا رہتا ہوں کہ وہ کھڑکی ہے خالی

تا حال یہی رونق بے سود ہے مجھ میں

یوں ہی تو نہیں لوگ گزرتے مرے دل سے

لگتا ہے کوئی منزل مقصود ہے مجھ میں

عاطف کمال رانا

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(1354) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Aatif Kamal Rana, Itna Hi Buhat Hai K Yeh Barood Hai Mujh Main in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Love, Sad, Social, Friendship, Heart Broken, Hope Urdu Poetry. Also there are 5 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.9 out of 5 stars. Read the Love, Sad, Social, Friendship, Heart Broken, Hope poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Aatif Kamal Rana.