Ik Yaado Ki Baarat Idher Bhi Hai Udhar Bhi

اک یادوں کی بارات اِدھر بھی ہے اُدھر بھی

اک یادوں کی بارات اِدھر بھی ہے اُدھر بھی

اب شدتِ جذبات اِدھر بھی ہے اُدھر بھی

میرے دلِ صد پارہ کے ٹُکڑے ہیں ہر اک سمت

تقسیم کی سوغات اِدھر بھی ہے اُدھر بھی

کیوں امن کے دشمن ہیں بہم دست و گریباں

دہشت کی خرافات اِدھر بھی ہے اُدھر بھی

سودہ نہیں کوئی بھی حالات سے اپنے

کہنے کو مساوات اِدھر بھی ہے اُدھر بھی

نفرت کی یہ دیوار گرا کیوں نہیں دیتے

جو وجہہِ فسادات اِدھر بھی ہے اُدھر بھی

اب جذبہٴ ایثار و محبت ہے ضروری

خمیازہٴ شُبہات اِدھر بھی ہے اُدھر بھی

یہ ترکِ تعلق کا نتیجہ ہے کہ جس سے

اب شوقِ ملاقات اِدھر بھی ہے اُدھر بھی

ہے رات ابھی آئے گی کب صبحِ بہاراں

ہر دل میں یہی بات اِدھر بھی ہے اُدھر بھی

جھگڑا ہے کہیں رنگ کہیں نسل کا برقی

اک یورشِ آفات اِدھر بھی ہے اُدھر بھی

احمد علی برقیؔ اعظمی

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(565) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Ahmed Ali Barqi Aazmi, Ik Yaado Ki Baarat Idher Bhi Hai Udhar Bhi in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Social Urdu Poetry. Also there are 13 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.3 out of 5 stars. Read the Social poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Ahmed Ali Barqi Aazmi.