Ronay Ko Bohat Roye Bohat Aah O Fghan Ki

رونے کو بہت روئے بہت آہ و فغاں کی

رونے کو بہت روئے بہت آہ و فغاں کی

کٹتی نہیں زنجیر مگر سود و زیاں کی

آئیں جو یہاں اہل خرد سوچ کے آئیں

اس شہر سے ملتی ہیں حدیں شہر گماں کی

کرتے ہیں طواف آج وہ خود اپنے گھروں کا

جو سیر کو نکلے تھے کبھی سارے جہاں کی

اس دشت کے انجام پہ پہلے سے نظر تھی

تاثیر سمجھتے تھے ہم آواز سگاں کی

الزام لگاتا ہے یہی ہم پہ زمانہ

تصویر بناتے ہیں کسی اور جہاں کی

پہلے ہی کہا کرتے تھے مت غور سے دیکھو

ہر بات نرالی ہے یہاں دیدہ وراں کی

آشفتہؔ اب اس شخص سے کیا خاک نباہیں

جو بات سمجھتا ہی نہیں دل کی زباں کی

آشفتہ چنگیزی

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(488) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Ashufta Changezi, Ronay Ko Bohat Roye Bohat Aah O Fghan Ki in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Social Urdu Poetry. Also there are 76 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.6 out of 5 stars. Read the Social poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Ashufta Changezi.