Tamam Omar Ke Sood O Zayan Ka Baar Liye ?

تمام عمر کے سود و زیاں کا بار لیے؟

تمام عمر کے سود و زیاں کا بار لیے؟

ہر انقلاب زمانہ سے منہ چھپائے ہوئے

حیات و مرگ کی سرحد پہ نیم خوابیدہ

میں منتظر تھا

مسرت کی کوئی دھندلی کرن

زماں مکاں سے پرے اجنبی جزیروں سے

دم سحر مجھے خوابوں میں ڈھونڈتی آئے

فشار وقت کی سرحد سے دور لے جائے

کھلی جو آنکھ

طلوع سحر نے ہنس کے کہا

حصار وقت سے آگے کوئی مقام نہیں

سمجھ سکو، تو زمان و مکاں کی قید نہیں

سمجھ سکو

تو یہی ذات بے کراں بھی ہے

ایاز محمود ایاز

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(519) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Ayaz Mahmood Ayaz, Tamam Omar Ke Sood O Zayan Ka Baar Liye ? in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Nazam, and the type of this Nazam is Social Urdu Poetry. Also there are 21 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 5 out of 5 stars. Read the Social poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Ayaz Mahmood Ayaz.