Hospital Ka Kamrah

اسپتال کا کمرہ

تمام شب کی دکھن، بے کلی، سبک خوابی

نمود صبح کو درماں سمجھ کے کاٹی ہے

رگوں میں دوڑتے پھرتے لہو کی ہر آہٹ

اجل گرفتہ خیالوں کو آس دیتی ہے

مگر وہ آنکھ جو سب دیکھتی ہے

ہنستی ہے

افق سے صبح کی پہلی کرن ابھرتی ہے

تمام رات کی فریاد اک سکوت میں چپ

تمام شب کی دکھن، بے کلی، سبک خوابی

حریری پردوں کی خاموش سلوٹوں میں گم

جو آنکھ زندہ تھی

خاموش چھت کو تکتی ہے

اور ایک آنکھ جو سب دیکھتی ہے

ہنسی

نمود صبح کی زرتار روشنی کے ساتھ

مہکتے پھول دریچے سے جھانک کر دیکھیں

تو میز در پہ کسی درد کا نشاں نہ ملے

اگالدان، دواؤں کی شیشیاں، پنکھا

کنواری ماں کا تبسم، صلیب آویزاں

ہر ایک چیز بدستور اپنی اپنی جگہ

نئے مریض کی آمد کا انتظار کرے

اور ایک آنکھ جو سب دیکھتی ہے

ہنستی رہے۔

ایاز محمود ایاز

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(450) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Ayaz Mahmood Ayaz, Hospital Ka Kamrah in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Nazam, and the type of this Nazam is Sad Urdu Poetry. Also there are 21 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.4 out of 5 stars. Read the Sad poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Ayaz Mahmood Ayaz.